مشہور ارب پتی نے پاکستانیوں کے بارے میں ایسی بات کہ دی کہ

اہل مغرب اعلیٰ تہذیبی اخلاق  اور انسانی برابری  کا بہت شور مچاتے  ہیں لیکن حقیقت یہ ہے کہ ان سے زیادہ نسل پرست دنیا میں کوئی نہیں۔ ان کے نزدیک صرف سفید چمڑی والا  ہی تہذیب کی علامت ہے ۔ اسی غلط سوچ کی تازہ مثال برطانیہ کی مشہور کاروباری شخصیت فرگوس ولسن نے قائم کی ہے، جس نے اپنی رئیل سٹیٹ کمپنی کو حکم جاری کردیا ہے کہ کسی بھی سفید فام کے علاوہ  شخص، خصوصاً پاکستانی اور بھارتی شہریوں کو گھر نہ دیا جائے کیونکہ جب وہ گھر سے جاتے ہیں  تو ان کے مصالحہ دار سالن کی بو ختم نہیں ہوتی

سکائی نیوز کی رپورٹ کے مطابق فرگوس ولسن نے اپنے اس فیصلے پر شرمندگی  کی بجائے اس کا دفاع کرتے ہوئے کہا ”سچ تو یہ ہے کہ ہمارے ہاں غیر سفید فام لوگ بہت زیادہ ہو گئے ہیں ۔ کچھ خاص قسم کے غیر سفید فام لوگوں کا یہ مسئلہ ہے، جو مصالحے والے کھانے پکاتے ہیں، اس کی بدبو قالین میں رچ جاتی ہے جو بعض دفعہ  تو نکلتی ہی نہیں جس کی وجہ سے قالین بدلنے پڑ جاتے ہیں ۔ اس کے ساتھ انہوں نے تنہا والدین، کم آمدنی والے محنت کشوں، بچوں والے خاندانوں، پالتوں جانور رکھنے والوں، سگر یٹ نوشوں اور تنہا رہنے والے افراد کے لئے بھی اپنے کرائے کے گھر ممنوع قرار دے رکھے ہیں۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.