میں اصل میں ایک شریف خاندان کی لڑکی ہوں ، دراصل ہوا یہ تھا کہ ۔۔۔۔۔

لاہور(این این ایس نیوز)ایسا صرف پاکستان میں ہی ہوتا لاہور کی سیشن عدالت نے نجی کیفے کے باہر پولیس اہلکار سے ج ھ گڑا کرنے کے مقدمہ میں ملوث خاتون 50ہزار روپے کے مچلکوں کے عوض عبوری ضمانت 13جنوری تک منظور کرتے ہوئے اسے گرفتار کرنے سے روکتے ہوئے تھانہ ڈیفنس بی پولیس سے رپورٹ بھی

طلب کر لی ہے ۔ تفصیلات کے مطابق ایڈیشنل سیشن جج سہیل انجم نے درخواست گزار خاتون کانزہ رحمان کی عبوری ضمانت پر سماعت کی درخواست گزار اپنے وکلاء کے ہمراہ عدالت میں پیش ہوئی اور ملزمہ کانزہ رحمان نے عدالت میں موقف اختیار کیا کہ وہ پاکستان کی شریف شہری ہیں، آئین اور قانون پر یقین رکھتی ہیں مے -نو-شی نہیں کر رہی تھی ملزمہ کانزہ رحمان کا کہنا تھا کہ پولیس اہلکار نے بد تمیزی کی اور قانون سے تجاوز کرتے ہوئے نازیبا الفاظ کہے شہریوں کے سامنے سر عام پولیس اہلکار نے برا بھلا کہا، سوشل میڈیا پر تصویر کا ایک رخ دکھایا گیا ہے وہ شامل تفتیش ہو کر پولیس کو حقائق سے آگاہ کرنا چاہتی ہے اس لئے عدالت سے استدعا ہے کہ اس کی ضمانت قبل از گرفتاری منظور کی جائے، عدالت نے ملزمہ کانزہ رحمان کی عبوری ضمانت منظور کرتے ہوئے پولیس کو اسے گرفتار کرنے سے روک دیا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *