مردہ لوگوں کے سننے کی صلاحیت کتنی ہو تی ہے؟ حضور پاک ﷺکا فرمان سامنے آگیا

این این ایس نیوز !فتح مبین غزوہ بدر میں قریش کے قتلو غارت ہونے والے نامی گرامی سرداروں اور انکے حواریوں کو ایک گڑھا کھودکر اس میں ڈال دیا گیاتھا تاکہ ان کو اجتماعی دفن کردیا جائے۔ صحابہ کرامؓ فرماتے ہیں ” ہم نے آدھی رات کے وقت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی آواز سنی۔ آپﷺ فرما رہے تھے” او گڑھے والو، تم نبی کا کتنا ہی بُرا کنبہ تھے، تم نے مجھے جھٹلایا

جب اور لوگوں نے میری تصدیق کی،تم نے مجھے گھر سے نکال دیا جب دوسروں نے مجھے پناہ دی، تم نے مجھ سے جنگ کی، جبکہ جنگ کی، جبکہ لوگوں نے میری نصرت کی“پھر سرکار دوجہاں ﷺ نے سرداران قریش جو نعشوں تلے دبے اس گڑھے میں پڑے تھے،انہیں اور انکے دیگر ساتھیوں کومخاطب کیا” او عتبہ بن ربیعہ، او شیبہ بن ربیعہ، او امیہ بن خلف، او ابوجہل بن ہشام، کیاتم نے اپنے ربّ کا وعدہ سچا ہوتے ہوئے دیکھ لیاہے؟ میں نے تواپنے ربّ کا وعدہ پورا ہوتے دیکھ لیا ہے“ صحابہ کرامؓ نے پوچھا” یارسول اللہ، آپ ان لوگوں کو خطاب کر رہے ہیں جو مر چکے ہیں؟“ آپﷺ نے جواب میں فرمایا” میں جو باتیں ان سے کر رہا ہوں،تمھاری سننے کی صلاحیت ان سے زیادہ نہیں ہے، تاہم یہ جواب دینے کی قدرت نہیں رکھتے“

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *